صیھونی

صیہونی حکومت کے سابق وزیر جنگ: نیتن یاہو کا اقتدار میں رہنا بدترین آپشن ہے

پاک صحافت صیہونی حکومت کے سابق وزیر جنگ نے موجودہ وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کو اقتدار میں رہنے کو صیہونیوں کے لیے بدترین آپشن قرار دیا۔

پاک صحافت کی رپورٹ کے مطابق صہیونی اخبار “مآریو” کے مطابق، “ایوکڈور لیبرمین”، سابق وزیر جنگ اور صیہونی حکومت کی “اسرائیل بیٹنو” کے نام سے مشہور جماعت کے سربراہ نے مزاحمتی تحریک پر ردعمل کا اظہار کیا۔ نیتن یاہو کی سربراہی میں حکمراں جماعت نے کنیسٹ پارلیمنٹ کے قبل از وقت انتخابات کرانے کی درخواست کی تھی اس حکومت نے کہا: انتخابات کی تاریخ کو آگے بڑھانا اچھا آپشن نہیں ہے، لیکن اس سے بھی بدتر نیتن یاہو اقتدار میں رہتے ہیں۔

اس سے پہلے اس صیہونی اہلکار نے صیہونی حکومت کے وزیر اعظم پر تنقید کی تھی اور نیتن یاہو کی کابینہ کو ایک تباہ کن کابینہ قرار دیا تھا جس کی جگہ دوسری کابینہ کو لایا جانا چاہیے۔

لائبرمین نے مزاحمت کے محور کے خلاف صیہونی حکومت کے وزیر اعظم کی مایوسی پر تنقید کرتے ہوئے کہا: نیتن یاہو صرف وقت ضائع کر رہے ہیں اور نہیں جانتے کہ کیا کرنا ہے۔

پاک صحافت کے مطابق فلسطینی اور لبنانی مزاحمت کی شکست نے قابض حکومت کے حکام کے درمیان کشیدگی میں اضافہ کر دیا ہے اور حکمران کابینہ کے مخالفین قبل از وقت انتخابات اور وزیر اعظم کی برطرفی کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

غزہ کی پٹی پر صیہونی حکومت کی جارحیت کو 9 ماہ سے زائد کا عرصہ گزر جانے کے بعد بھی یہ حکومت دن بہ دن اپنے اندرونی اور بیرونی بحرانوں میں مزید دھنس رہی ہے۔ اس طویل عرصے کے بعد بھی صیہونی حکومت حماس کو تباہ کرنے اور غزہ کی پٹی سے صیہونی قیدیوں کی واپسی کے اپنے مقررہ اہداف تک نہیں پہنچ سکی ہے۔

اس عرصے کے دوران صیہونی حکومت نے اس خطے میں جرائم، قتل عام، تباہی، جنگی جرائم، بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی، امدادی تنظیموں پر بمباری اور قحط کے علاوہ کچھ حاصل نہیں کیا۔

یہ بھی پڑھیں

اسرائیل

غزہ میں مزاحمتی کمانڈروں کے قتل کی جھوٹی خبریں شائع کرنے سے “اسرائیل” کا کیا مقصد ہے؟

پاک صحافت ایک رپورٹ میں عرب دنیا کے معروف تجزیہ نگار عبدالباری عطوان نے غزہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے