بلنکن

غزہ میں جنگ بندی پر ویٹو کے بعد امریکی وزیر خارجہ کی اپنے سعودی ہم منصب سے ملاقات!

پاک صحافت ایک طرف امریکہ غزہ میں ناجائز دہشت گرد اسرائیلی حکومت کے ہاتھوں فلسطینی عوام کی نسل کشی کی حمایت کر رہا ہے اور دوسری طرف عرب ممالک سے غزہ جنگ پر بات بھی کر رہا ہے۔ ان کی دوغلی پالیسی کی وجہ سے غزہ میں شہید ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے غزہ میں جنگ بندی پر عمل درآمد کے لیے متفقہ طور پر قرارداد پیش کی تھی جسے امریکا نے ویٹو کر دیا تھا۔ متحدہ عرب امارات کی طرف سے پیش کی گئی اس تجویز کو 100 سے زائد ممالک کی حمایت حاصل تھی۔ سلامتی کونسل کے 15 مستقل ارکان میں سے 13 ارکان بھی اس کے ساتھ تھے لیکن امریکہ نے اسے بھی پاس نہیں ہونے دیا۔ دریں اثناء سعودی عرب کے وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے واشنگٹن ڈی سی میں امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن سے ملاقات کی جس میں غزہ جنگ پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ ملاقات میں سعودی عرب اور امریکہ کے درمیان دوطرفہ تعلقات کا جامع جائزہ لیا گیا۔ موصولہ اطلاعات کے مطابق ملاقات کے دوران ریاض اور واشنگٹن کے درمیان دوطرفہ تعلقات کا جائزہ لیا گیا اور غزہ کی پٹی اور اس کے گرد و نواح میں ہونے والی پیش رفت کے ساتھ ساتھ مشترکہ دلچسپی کے علاقائی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

امریکا اور سعودی عرب کے وزرائے خارجہ کی ملاقات کے بعد جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ دونوں ممالک کے حکام نے کشیدگی کی رفتار کو کم کرنے اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے تمام ممکنہ کوششوں پر تبادلہ خیال کیا کہ تشدد میں اضافہ نہ ہو تاکہ بین الاقوامی امن اور اس کے خطرناک اثرات مرتب ہوں۔ سیکورٹی سے بچا جا سکتا ہے. فیصل بن فرحان نے امن عمل کی بحالی اور استحکام کے لیے سازگار حالات پیدا کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے اس بات کو یقینی بنانے کی اہمیت پر زور دیا کہ فلسطینی عوام اپنے جائز حقوق سے لطف اندوز ہوں۔ دریں اثناء ماہرین کا خیال ہے کہ امریکہ اسرائیل کے زمینی جرائم کو جواز فراہم کرنے کی کوشش کر رہا ہے لیکن اس کے ساتھ ساتھ وہ اپنی دوغلی پالیسیوں پر عمل پیرا ہوتے ہوئے عرب ممالک کے ساتھ غزہ جنگ کے معاملے پر کھل کر بات چیت بھی جاری رکھے ہوئے ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے