صدر

مغرب کی زوال پذیر طاقت نے میکرون کو خوفزدہ کرنا شروع کر دیا

پاک صحافت فرانسیسی صدر نے پیرس میں سفارت کاروں کی کانفرنس میں انتہائی اہم بیان دیتے ہوئے کہا کہ مغربی دنیا کی طاقت میں کمی آرہی ہے اور یورپ کے کمزور ہونے کا خطرہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ بین الاقوامی معاملات پیچیدہ ہوتے جا رہے ہیں اور اس کے نتیجے میں مغرب بالخصوص یورپ کے کمزور ہونے کا خطرہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اس موضوع پر کھل کر بات کرنی چاہیے۔

عالمی معیشت اور تجارت میں مشرقی عالمی طاقتوں کی بڑھتی ہوئی مداخلت کے پیش نظر مغرب کے زوال کے بارے میں میکرون کا بیان بہت اہم ہو جاتا ہے۔ حالیہ دنوں میں یورپ کی شرکت میں کمی آئی ہے۔ مغرب کے زوال کے حوالے سے بعض نکات کا ذکر کرتے ہوئے میکرون نے کہا کہ ایک بات یہ ہے کہ آبادی کم ہو رہی ہے اور عالمی تجارت اور دولت کی تخلیق میں ہماری شرکت کم ہو گئی ہے۔ اگر 2008 اور 2010 کے درمیان آنے والی معاشی کساد بازاری کا آج کے حالات سے موازنہ کیا جائے تو یہ سچائی اور بھی واضح طور پر سامنے آتی ہے۔

دوسری بات یہ ہے کہ یوکرین کی جنگ اور اس جنگ میں امریکہ کی خواہش کے مطابق یوکرین کے لیے یورپ کی سٹرٹیجک حمایت، روس پر جامع پابندیاں اور روس سے یورپ کو گیس کی برآمدات روکنا وہ عوامل ہیں جن کی وجہ سے معاشی اور سماجی بحران پیدا ہوئے ہیں۔ اگر یہ جنگ جاری رہی تو بحران مزید بڑھے گا۔

سرد جنگ کے بعد امریکہ نے مغرب کے سربراہ کی حیثیت سے پوری دنیا پر مغربی تسلط کے یک قطبی نظام کو برقرار رکھنے کی بھرپور کوشش کی لیکن مختلف پہلوؤں سے سیاسی اور عسکری طاقتوں اور روس جیسے ممالک کے ابھرنے سے بین الاقوامی صورتحال بدل گئی۔ چین اور بھارت بین الاقوامی سطح پر ایک بڑی طاقت بن کر ابھرے۔ اب یہ قوتیں برکس اور شنگھائی تعاون تنظیم جیسے پلیٹ فارم بنا کر سیاست، معیشت اور کاروبار کے پلیٹ فارم پر ایک نیا نظام بنانے کی کوشش کر رہی ہیں۔

اس وقت مغرب کو چین اور روس جیسے حریفوں کا سامنا ہے۔ چین اس وقت دنیا کی دوسری بڑی اقتصادی طاقت ہے لیکن اندازوں کے مطابق 2030 تک یہ دنیا کی پہلی معیشت بن جائے گی اور اس سے مغرب بالخصوص امریکہ کے تجارتی اور معاشی غلبے پر شکوک پیدا ہوتے ہیں۔ 1990 کی دہائی روس کے لیے مشکلات اور زوال کا دور تھا لیکن 2000 سے ولادیمیر پوٹن کے دور حکومت میں اس ملک نے اپنی کھوئی ہوئی طاقت دوبارہ حاصل کر لی ہے اور اب اسے مغرب کا شدید حریف سمجھا جاتا ہے۔

اس وقت مغرب کی توسیع پسند طاقتوں اور ان کے حریفوں کے درمیان رسہ کشی جاری ہے۔ مغرب نے کئی صدیوں تک دنیا پر اپنا تسلط برقرار رکھا اور دوسری قوموں کا بڑے پیمانے پر استحصال کیا۔ سرد جنگ کے دوران اور اس کے بعد امریکہ نے مغرب کی قیادت کی اور دنیا میں اپنا تسلط پھیلانے کی بھرپور کوششیں کیں۔ لیکن اس کے باوجود دنیا کے حالات بدلتے رہے اور اب مغرب کے رہنما اپنے الفاظ میں اعتراف کر رہے ہیں کہ مغربی بالادستی کا دور ختم ہو چکا ہے۔

ایک اہم بات یہ ہے کہ دنیا میں مغرب کے زوال کی بڑی وجہ ان کا غلط رویہ اور کام کرنے کا ناقص انداز تھا۔ میکرون نے اگست 2019 میں کہا تھا کہ ہم اس وقت دنیا پر مغربی تسلط کے آخری مرحلے میں ہیں اور یہ مغرب کی غلطیوں کا نتیجہ ہے۔

یہ بھی پڑھیں

بات چیت

روسی اور آذربائیجان کے صدور کے درمیان بات چیت، روسی فوجیوں کی ہلاکت پر افسوس

پاک صحافت جمہوریہ آذربائیجان کے صدر الہام علییف نے روسی صدر ولادیمیر پوتن کے ساتھ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے