روسی ڈوما کے سربراہ: واشنگٹن اور برسلز دنیا کو تباہ کن جنگ کی طرف دھکیل رہے ہیں

روس

پاک صحافت روسی ڈوما کے سربراہ ویاچسلاو ولوڈن نے کہا ہے کہ واشنگٹن اور برسلز اپنے فیصلوں سے دنیا کو تباہ کن جنگ کی طرف دھکیل رہے ہیں اور روس پر حملہ کرنے کے لیے امریکہ اور نیٹو کی جانب سے یوکرین کو بھاری ہتھیاروں کی فراہمی کا اعلان کیا ہے۔ یہ ماسکو کو زیادہ طاقتور ہتھیاروں کے استعمال کی طرف لے جائے گا۔

پاک صحافت کے مطابق، ولودین نے اپنے ٹیلیگرام چینل پر لکھا: کیف حکومت کو جارحانہ ہتھیاروں کی فراہمی ایک عالمی تباہی کا باعث بنے گی۔ اگر واشنگٹن اور نیٹو ممالک ایسے ہتھیار بھیجتے ہیں جو پرامن شہروں پر حملہ کرنے کے لیے استعمال ہو سکتے ہیں یا ہماری سرزمین پر قبضہ کرنے کی کوشش کر سکتے ہیں، تو جوابی کارروائی مزید طاقتور ہتھیاروں کے استعمال کے بعد ہو گی۔

سینئر روسی قانون ساز نے دوسرے ممالک کے ناقابل تسخیر دلائل پر کڑی تنقید کی کہ جوہری طاقتوں نے کبھی بھی مقامی تنازعات میں بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانے والے ہتھیاروں کا استعمال نہیں کیا، کہا: "ان طاقتوں کو کبھی بھی ایسی صورت حال کا سامنا نہیں کرنا پڑا جہاں ان کے شہریوں کی سلامتی یا ان کی علاقائی سالمیت کو خطرہ لاحق ہو۔” خطرہ ہو

روسی ڈوما کے سربراہ نے امریکی کانگریس، جرمن پارلیمنٹ، فرانسیسی قومی اسمبلی اور دیگر یورپی پارلیمانوں سے کہا کہ وہ انسانیت کے تئیں اپنی ذمہ داری کا احساس کریں۔

وولودین نے اس بات پر بھی زور دیا: اپنے فیصلوں کے ساتھ، واشنگٹن اور برسلز دنیا کو ایک تباہ کن جنگ کی طرف اور ایک فوجی آپریشن کی طرف دھکیل رہے ہیں جو ہم نے اب تک دیکھے گئے اقدامات سے بالکل مختلف ہوگا۔

سینئر روسی اہلکار نے مزید کہا کہ ماسکو کے ہتھیاروں کی تکنیکی برتری کو دیکھتے ہوئے ایسے فیصلے کرنے والے مغربی سیاستدانوں کو یہ سمجھ لینا چاہیے کہ اس سے ایک عالمی تباہی ہو سکتی ہے جو ان کے ممالک کو تباہ کر دے گی۔

یوکرین کے لیے فوجی امداد کے نئے دور میں مغربی ممالک نے اسالٹ ٹینک سمیت جدید ہتھیاروں کی فراہمی کو ایجنڈے میں رکھا ہے۔ اس معاملے نے امریکیوں اور یورپیوں میں اختلاف پیدا کر دیا ہے اور اس کے نتیجے میں ماسکو کا شدید ردعمل بھی سامنے آیا ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں