نیٹو یوکرین سے پیچھے ہٹ گیا

نیٹو

پاک صحافت نیٹو کے رکن ممالک کے اجلاس میں یوکرین کی اس تنظیم میں شمولیت پر کوئی بات نہیں ہو گی۔

سلووینیا کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ نیٹو تنظیم میں یوکرین کی جگہ کا معاملہ نیٹو کے رکن ممالک کے وزرائے خارجہ کے اجلاس میں زیر بحث نہیں آئے گا۔ نیٹو کے وزرائے خارجہ کا اجلاس رومانیہ کے دارالحکومت بخارسٹ میں ہو رہا ہے۔

دریں اثنا، یوکرین کی وزارت خارجہ کی طرف سے اعلان کیا گیا ہے کہ ہنگری نے بخارسٹ میں ہونے والے اجلاس میں یوکرین کی شرکت پر روک لگا دی ہے۔ اگرچہ یوکرین سے وعدہ کیا گیا ہے کہ اسے نیٹو کا رکن بنایا جائے گا۔ کیف کی حکومت کو 2008 سے کہا جا رہا ہے کہ وہ شمالی بحر اوقیانوس کے معاہدے کی تنظیم کا رکن منتخب ہو گی۔ بعض ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ موضوع یوکرین کی جنگ کی اہم وجوہات میں سے ایک ہے۔

روس کا کہنا ہے کہ مغرب کا یہ کام اشتعال انگیز عمل ہے۔ روس کی قومی سلامتی کونسل کے نائب سربراہ الیگزینڈر وینڈیکٹوف کے مطابق یوکرین کو نیٹو کی رکنیت دینا ایک پروپیگنڈہ چال سے زیادہ کچھ نہیں۔ انہوں نے کہا کہ یوکرین اچھی طرح جانتا ہے کہ یہ چیز تیسری عالمی جنگ کا باعث بنے گی۔

یوکرین کو نیٹو کا رکن بنانے کی مہم بعض یورپی اور امریکی رہنماؤں نے چلائی تھی۔ 2008 میں بخارسٹ میں نیٹو کے اجلاس میں رکن ممالک نے یوکرین کو اپنا رکن بنا کر نیٹو کو مشرق کی طرف پھیلانے کا فیصلہ کیا۔ اس فیصلے میں جارجیا کا بھی نام تھا۔ یہ وہ ممالک ہیں جو روس کی سرحد کے قریب واقع ہیں۔ اس وقت سے، روس اور نیٹو کے درمیان یوکرین کو نیٹو میں شامل کرنے کے معاملے پر اختلاف ہے۔ یوکرائنی حقوق کا خیال ہے کہ اگر ایسا ہوتا ہے تو اسے روس کی طرف سے کسی بھی خطرے کے خلاف مضبوط حمایت حاصل ہو گی۔

اگرچہ یوکرین کو نیٹو کا رکن بنانے کے حوالے سے بہت باتیں کی جا رہی ہیں لیکن اس معاملے کے حوالے سے خود مغربی تنظیم کے اندر بھی شدید اختلافات پائے جاتے ہیں۔ اس تناظر میں نیٹو کے سیکرٹری جنرل نے کہا ہے کہ یوکرین کی رکنیت کے لیے نیٹو کے تمام رکن ممالک کے درمیان یکجہتی کی ضرورت ہے۔ انہوں نے یہ خدشہ بھی ظاہر کیا ہے کہ ایسا ہونے کی صورت میں نیٹو اور روس کے درمیان براہ راست تصادم شروع ہو سکتا ہے۔

پچھلی تین دہائیوں سے امریکہ اور نیٹو روس کو گھیرنے کے لیے طرح طرح کے حربے کھیل رہے ہیں۔ یوکرین کی جنگ کو بھی مغرب کی اسی چال کا حصہ قرار دیا جا رہا ہے۔ 24 فروری کو شروع ہونے والی یوکرین جنگ اب دسویں مہینے میں داخل ہو چکی ہے۔اس جنگ میں یوکرین کو بڑے پیمانے پر نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ جیسا کہ اعلان کیا گیا ہے کہ بخارسٹ میں نیٹو کے اجلاس میں یوکرین کی شمولیت کے معاملے پر بات نہیں کی جائے گی۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ یوکرین نے مغرب پر بھروسہ کرکے کتنی بڑی غلطی کی ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں