برطانوی

برطانوی وزیراعظم کا انتخاب اب بھارت اور پاکستان کے درمیان معرکہ بن گیا

پاک صحافت ہندوستانی نژاد برطانوی کنزرویٹو پارٹی کے رہنما رشی سنک نے تصدیق کی ہے کہ وہ برطانیہ کے وزیر اعظم کے عہدے کی دوڑ میں شامل ہیں۔

ٹوئٹر پر دیے گئے ایک بیان میں رشی سنک نے لکھا کہ ‘برطانیہ ایک عظیم ملک ہے لیکن ہم ایک سنگین معاشی بحران کا سامنا کر رہے ہیں۔’ انہوں نے کہا کہ میں اپنی معیشت کو ٹھیک کرنا چاہتا ہوں، اپنی پارٹی کو متحد کرنا چاہتا ہوں اور اپنے ملک کے لیے کام کرنا چاہتا ہوں۔ پاکستانی نژاد نامور کنزرویٹو ارکان پارلیمنٹ برطانیہ کے وزیر اعظم کے عہدے کے لیے سنک کی حمایت کر رہے ہیں۔ جب کہ ہندوستانی نژاد کچھ ایم پیز بورس جانسن کی حمایت کر رہے ہیں۔ سنک کے پیچھے کھڑے ہونے والوں میں ساجد جاوید شامل ہیں، جو پہلے برطانوی حکومت میں ہوم سیکرٹری اور چانسلر آف دی ایکسکیور رہ چکے ہیں، اور رحمان چشتی، جو پہلے جونیئر وزیر رہ چکے ہیں۔

دریں اثنا، بورس جانسن کیمپ میں ایم پیز پریتی پٹیل ہیں، جو پہلے ہوم سکریٹری تھیں، آلوک شرما، جو برطانیہ کی پچھلی دو حکومتوں میں کابینہ کے وزیر رہ چکے ہیں، اور شیلیش وارا، جنہوں نے ہندوستانی کنزرویٹو میں سب سے طویل عرصے تک ایم پی کے طور پر کام کیا ہے۔ اراکین پارلیمنٹ اس کے ساتھ ہی سبکدوش ہونے والی لز ٹرس حکومت میں کابینہ کے وزیر اور سابق وزیر اعظم جانسن کے حامی جیکب ریس موگ نے ​​کہا ہے کہ جانسن وزیر اعظم بننے کی دوڑ میں ہیں۔ یہ واضح نہیں ہے کہ جانسن کو 100 قانون سازوں کی حمایت حاصل ہے یا نہیں۔ وزیراعظم بننے کے لیے یہ تعداد کم از کم ضروری ہے۔ لیکن کنزرویٹو ہوم کی ویب سائٹ کے مطابق، سنک کے حق میں وزیر اعظم کے عہدے کے لیے کافی حمایت حاصل ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے