وزیر اعظم

میں ایک کٹر صیہونی ہوں، برطانوی وزیر اعظم لز ٹرس

پاک صحافت برطانیہ کی نئی وزیر اعظم اور کنزرویٹو پارٹی کی رہنما لز ٹرس نے کہا ہے کہ میں ایک کٹر صہیونی ہوں اور اپنی حکومت میں برطانیہ اور اسرائیل کے تعلقات کو نئی بلندیوں تک لے جانے کے لیے پرعزم ہوں۔

برطانوی وزیر اعظم کا صیہونی ہونے پر زور دینا مغربی رہنماؤں کے حوالے سے کوئی نئی بات نہیں۔ اس سے قبل امریکی صدر جو بائیڈن اور دیگر کئی رہنما صیہونی حکومت کو خوش کرنے کے لیے ایسے بیانات دیتے رہے ہیں۔ دوسری طرف یہ رہنما بھی انسانی حقوق کے دفاع میں اپنے آپ کو منواتے ہیں جبکہ دنیا کی سب سے زیادہ صیہونی حکومت انسانی حقوق کی پامالی کی مرتکب ہوتی ہے اور بین الاقوامی قوانین کو اپنے پیروں تلے روندتی رہتی ہے۔

اسرائیل پچھلی سات دہائیوں سے فلسطینیوں پر مظالم ڈھا رہا ہے، ان پر نسلی مظالم ڈھا رہا ہے اور ان کے گھروں اور کھیتوں کو تباہ کر کے غیر قانونی بستیاں قائم کر رہا ہے۔ اسرائیلی حکام فلسطینیوں کے انسانی حقوق کو باقاعدہ نہیں بناتے، یہاں تک کہ خوراک اور ادویات جیسی بنیادی ضروریات کی فراہمی میں بھی خلل ڈالتے ہیں۔

ایسے میں بھی برطانیہ کے وزیر اعظم جو ایک مہذب اور ثقافتی ملک ہونے کا دعویٰ کرتے ہیں، صیہونی حکومت کے مظالم کی نہ صرف حمایت اور حمایت کر رہے ہیں بلکہ خود کو کٹر صہیونی قرار دے رہے ہیں۔ اگرچہ خود صیہونی ہونا بنیاد پرستی اور انتہا پسندی کی علامت ہے، لیکن ٹراس صہیونی حکام سے دو قدم آگے ہے اور خود کو بنیاد پرست صیہونی قرار دیتا ہے۔

47 سالہ میری الزبتھ ٹرس نے آکسفورڈ یونیورسٹی میں فلسفہ، سیاست اور اقتصادیات کی تعلیم حاصل کی۔ اس نے آکسفورڈ میں کنزرویٹو پارٹی میں شمولیت اختیار کی اور 2001 میں ویسٹ یارکشائر میں ہیمس ورتھ کے لیے پارٹی کی امیدوار بنیں، لیکن الیکشن ہار گئیں۔ اس کے بعد وہ 2005 میں ویسٹ یارکشائر کی کالڈر ویلی سے دوبارہ الیکشن ہار گئیں۔ لیکن ان کے سیاسی عزائم یہیں ختم نہیں ہوئے اور 2010 میں وہ ایک محفوظ نشست سے الیکشن جیت گئیں۔

اس جنگ بندی پر، جسے اکثر متنازعہ خارجہ پالیسی بیانات کی وجہ سے تسلیم کیا جاتا ہے، فلسطین کی اسلامی مزاحمتی تحریک حماس کے رہنما سامی ابوزہاری کا کہنا ہے کہ برطانوی وزیر اعظم کی صیہونی حکومت کی حمایت کا مطلب یہ ہے کہ وہ بھی ظالم صہیونی حکام کے ساتھ ہیں۔ میں کھڑا ہو گیا ہوں۔ ایسے لوگ ہیں جو فلسطینی بچوں اور معصوم خواتین کی نسل کشی پر زور دے رہے ہیں اور انسانیت پر دھبہ ہیں۔

فلسطینی اور ان کے حامی کبھی نہیں بھولیں گے کہ برطانیہ واحد ملک ہے جس نے فلسطینی سرزمین پر ناجائز صیہونی حکومت کی بنیاد رکھی۔ اس کے بعد سے اس ملک نے فلسطینیوں پر اسرائیل کے ہر طرح کے مظالم کی حمایت کی ہے اور یہ ان ممالک میں سے ایک ہے جو اسرائیل کو بھاری مقدار میں ہتھیار فراہم کر رہا ہے، تاکہ وہ فلسطینیوں پر جبر اور ہمسایہ ممالک کی قومی خودمختاری کو جاری رکھ سکے۔ خلاف ورزی جاری رکھیں

برطانوی وزیراعظم نے کہا ہے کہ وہ غیر قانونی طور پر مقبوضہ بیت المقدس کو تل ابیب سے برطانوی سفارت خانے میں منتقل کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔ اب تک اسرائیل کے حامی چار ممالک امریکہ، کوسوو، گوئٹے مالا اور ہنڈوراس اپنے سفارت خانے یروشلم یا بیت المقدس منتقل کر چکے ہیں لیکن دنیا کے بیشتر ممالک نے اپنے سفارت خانے تل ابیب سے یروشلم منتقل کرنے سے انکار کر دیا ہے۔بین الاقوامی کمیونٹی یروشلم کے مشرقی حصے پر صیہونی حکومت کے قبضے کو تسلیم نہیں کرتی اور اسے غیر قانونی سمجھتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے