امریکا

امریکہ اور اس کے اتحادیوں کا ہدف مغربی ایشیا کے تیل کے ذرائع کو کنٹرول کرنا ہے

پاک صحافت اسلامی فرقوں کو اکٹھا کرنے والے ورڈ فورم کے سیکرٹری جنرل کا کہنا ہے کہ امریکہ اور اس کے اتحادیوں کا ہدف مغربی ایشیا کے تیل کے ذرائع کو کنٹرول کرنا ہے۔

روس میں منعقد ہونے والی کانفرنس میں، اسلامی فرقوں کو قریب لانے والے ورڈ فورم کے سیکرٹری جنرل نے کہا کہ یہ تنظیم نئے لفظی ترتیب میں ایک بامعنی کردار ادا کرنے کے لیے تیار ہے جس میں تکثیریت بھی شامل ہے۔

حجۃ الاسلام والمسلمین حمید شہریاری نے “جسٹ اینڈ ملٹی پولر ورلڈ آرڈر اور محفوظ ترقی” کے عنوان سے منعقدہ کانفرنس میں کہا کہ اس کانفرنس کا مقصد دنیا کی تیزی سے بدلتی ہوئی سیاسی صورتحال کے درمیان اسلامی ممالک اور روسی فیڈریشن کے درمیان تعاون کو فروغ دینا ہے۔ اور اس وقت دنیا کو درپیش مواقع اور چیلنجز کا جائزہ لینے کے لیے مکمل امن کو یقینی بنانا۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ اور اس کے حواریوں کی طرف سے اپنے ناجائز مفادات کے حصول کے لیے عالمی سامراج کی مرضی مسلط کرنے کی وجہ سے دنیا دو اہم واقعات کا مشاہدہ کر رہی ہے۔ ایک غزہ میں جاری نسلی تطہیر اور دوسرا یوکرین میں جنگ۔ ان دونوں مسائل نے ظاہر کیا کہ نیٹو کی قیادت میں عالمی تسلط اپنے مقاصد کے حصول کے لیے ہر طرح کا سہارا لے سکتا ہے۔ اس کی نظر میں لوگوں کی زندگی کی کوئی اہمیت نہیں۔

شہریاری نے وضاحت کی کہ امریکہ اور اس کے اتحادیوں نے مغربی ایشیا اور یورپ میں اپنے مفادات کے حصول کے لیے کئی جنگیں شروع کیں۔ یوکرین کی جنگ شروع کر کے وہ روسی گیس کو یورپ جانے سے روک رہے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ وہ ناجائز صیہونی حکومت کی حمایت کرکے مغربی ایشیا میں اپنے مقاصد حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

اسلامی فرقوں کو قریب لانے والے ورڈ فورم کے سیکرٹری جنرل کے مطابق وہ مشرق وسطیٰ میں توانائی کے ذرائع کو کنٹرول کر کے اپنے مقاصد حاصل کرنا چاہتے ہیں جس کی منصوبہ بندی دوسری جنگ عظیم کے دوران کی گئی تھی۔ اس نئے ورڈ آرڈر کے تحت دنیا بھر کے انصاف کے متلاشی متحد ہو کر مظالم کی مخالفت کر رہے ہیں اور اجتماعی قتل و غارت اور جنگی جنون کی مذمت کر رہے ہیں۔

شہریاری نے زور دے کر کہا کہ یہ دنیا کے مظلوم لوگوں کی جانب سے ایک انسانی بیداری ہے۔ وہ انسانی اقدار کی پیروی کرتے ہیں اور سرمایہ داروں سے بیزار ہیں جو دنیا کی آبادی کا صرف ایک فیصد ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اسلام جیسے مقدس مذہب نے پوری دنیا کے مظلوموں کا ساتھ دے کر ثابت کر دیا ہے کہ وہ تمام مظلوموں کو تحفظ دینے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

فلسطین میں ہونے والی تبدیلیوں کے بارے میں شہریاری نے کہا کہ الاقصیٰ طوفان آپریشن دراصل صہیونی برسوں کی ناانصافی، قبضے، نسل کشی اور مظالم پر عالمی اداروں کی خاموشی کا نتیجہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ غزہ کے باشندے گزشتہ سات ماہ سے صیہونیوں کے وحشیانہ حملوں کا سامنا کر رہے ہیں۔ اس عرصے کے دوران 40 ہزار سے زائد فلسطینی یا تو مارے گئے یا ان کے ٹھکانے کا پتہ نہیں چل سکا۔ 80000 سے زائد بچے، بوڑھے، خواتین اور نوجوان زخمی ہیں۔ غزہ میں بمباری کی وجہ سے بیس لاکھ لوگ بے گھر ہو چکے ہیں۔

اسلامی فرقوں کو قریب لانے والے ورڈ فورم کے سیکرٹری جنرل کے مطابق امریکہ کی قیادت میں بعض مغربی ممالک نے ناجائز صیہونی حکومت کی حمایت میں اپنا دل، دماغ اور مال لگا دیا ہے۔ وہ اسرائیل کو ٹوٹنے سے روکنے کے لیے بڑے پیمانے پر پیسے اور ہتھیار دونوں استعمال کر رہے ہیں۔ ان کا خیال ہے کہ خطے میں ان کے مفادات صرف اسی صورت میں محفوظ ہوں گے جب علاقے میں ناجائز صیہونی حکومت موجود ہو۔ جو کچھ پوشیدہ تھا وہ سامنے آگیا۔ عالمی سامراج کے عزائم زیادہ سے زیادہ بے نقاب ہوئے اور ساتھ ہی آزادی اور انسانی حقوق کی حمایت میں نعرے بھی بے نقاب ہوئے۔

یہ بھی پڑھیں

اطالوی وزیراعظم

اسرائیل حماس کے جال میں پھنس رہا ہے۔ اطالوی وزیراعظم

(پاک صحافت) اطالوی وزیراعظم جارجیا میلونی نے کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ اسرائیل حماس …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے