غزہ

امریکی سینیٹر نے صیہونی حکومت کو ہتھیاروں کی ترسیل بند کرنے کا مطالبہ کیا

پاک صحافت امریکی سینیٹر الزبتھ وارن نے صیہونی حکومت کو امریکی ہتھیار بھیجنا بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

الجزیرہ کے حوالے سے ارنا کی جمعہ کی صبح کی رپورٹ کے مطابق، امریکی سینیٹر وارن نے اپنے سوشل میڈیا ایکس (سابق ٹویٹر) اکاؤنٹ پر لکھا: اسرائیل کے وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو (حکومت) کی انتہا پسند حکومت جان بوجھ کر انسانی امداد کو غزہ پہنچنے سے روک رہی ہے۔

سیناٹور

انہوں نے کہا کہ یہ انتہائی خوفناک ہے کہ جن فلسطینیوں کو فوری امداد کی ضرورت ہے وہ بھوک سے مر رہے ہیں اور اس بات پر زور دیا کہ امریکہ کو اس حکومت کو بم اور فوجی سازوسامان بھیجنے کا سلسلہ جاری نہیں رکھنا چاہئے۔

اس کے علاوہ ایک اور امریکی سینیٹر کرس وان ہولن نے کہا کہ غزہ میں قحط قدرتی آفت کا نتیجہ نہیں ہے بلکہ صیہونی حکومت کی پالیسیوں کی وجہ سے ہوا ہے اور امریکہ سے مطالبہ کیا کہ وہ تل ابیب پر اپنی شرائط عائد کرے غزہ کے لیے انسانی امداد اور جاری رکھیں۔اس حکومت کو فوجی سازوسامان بھیجنے کا انحصار اس خطے میں زیادہ سے زیادہ انسانی امداد بھیجنے میں اسرائیل (حکومت) کے تعاون پر ہے۔

فوٹو

انہوں نے ایکس سوشل میڈیا (سابقہ ​​ٹویٹر) پر اپنے صارف اکاؤنٹ میں لکھا کہ غزہ میں فلسطینی پناہ گزینوں کے لیے اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی (آنروا) کا کام جاری رکھنا ایک اہم مسئلہ ہے لیکن بنجمن نیتن یاہو اور ان کے انتہا پسند اتحادیوں کا ارادہ ہے۔ اسے زمین سے تباہ کرنا

میری لینڈ کے ریاستی سینیٹر نے یہ بیان کرتے ہوئے کہآنروا غزہ میں انسانی امداد کی تقسیم کا بنیادی عنصر تھا اور اسے ختم نہیں کیا جا سکتا، انہوں نے کہا: اسرائیل (حکومت) نے 7 اکتوبر کے حملوں میں آنروا کے ملازمین کے ملوث ہونے کا کوئی ثبوت فراہم نہیں کیا ہے۔ (15 اکتوبر) اور حماس کے ساتھ آنروا کے تعاون کے بارے میں ان کے دعوے جھوٹ ہیں، لہذا جو بائیڈن کو آنروا کے لیے اپنی حمایت دوبارہ شروع کرنی چاہیے۔

ارنا کے مطابق سینیٹر کرس وان ہولن نے اس سے قبل صیہونی حکومت کو خبردار کیا تھا کہ اگر اس کی افواج نے غزہ کے جنوب میں رفح شہر پر حملہ کیا تو امریکہ اس حکومت کو ہتھیاروں کی فروخت بند کر دے گا۔

انہوں نے ایک بیان میں کہا: اگر صیہونی حکومت کے وزیر اعظم رفح پر بڑے حملے کا ارادہ رکھتے ہیں تو اس حکومت کو ہتھیاروں کی فروخت روکنا میز پر ہو گا۔

دوسری جانب صیہونی حکومت کے ذرائع ابلاغ نے اس سے قبل خبر دی تھی کہ امریکی صدر جو بائیڈن کی حکومت نے اس حکومت کے اہلکاروں کو خبردار کیا ہے کہ اگر رفح کے خلاف آپریشن بڑی تعداد میں فلسطینیوں کی موجودگی کے ساتھ کیا گیا تو اس میں تاخیر ہو جائے گی۔ اسرائیل کو ہتھیاروں کی ترسیل..

بائیڈن نے رفح پر حملے اور اسرائیل کو ہتھیاروں کی فروخت محدود کرنے کے بارے میں متضاد بیانات دیے ہیں۔ جب کہ انھوں نے پچھلے سال کہا تھا کہ اسرائیل کو فوجی امداد کی شرط لگانے کی تجویز “سوچنے کے لائق ہے۔” لیکن حال ہی میں انھوں نے ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ وہ اسرائیل کو ہتھیار بھیجنا جاری رکھیں گے اور ساتھ ہی انھوں نے کہا کہ غزہ میں شہریوں کا قتل ان کی ’سرخ لکیر‘ ہے۔

یہ بھی پڑھیں

امریکی صدور

سی این بی سی : “مہنگائی کا بحران”؛ ٹرمپ کے خلاف بائیڈن کی بڑی انتخابی پریشانی

پاک صحافت سی این بی سی کے تازہ ترین سروے کے مطابق امریکی ووٹرز مہنگائی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے