امریکی عدلیہ کے فیصلے سے ٹرمپ کی مشکلات بڑھ گئیں

ٹرمپ

پاک صحافت امریکی سپریم کورٹ نے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ٹیکس ریکارڈ کو ایوان نمائندگان کی کمیٹی کے سامنے پیش کرنے کی اجازت دے دی ہے۔

ٹرمپ بہت کوشش کر رہے تھے کہ وہ اپنے ٹیکس ریکارڈ اور اپنی آمدنی کے مکمل اکاؤنٹس کو سامنے نہ لائیں کیونکہ ان کے مطابق یہ 2024 کے صدارتی انتخابات میں ان کے لیے مشکلات پیدا کر سکتا ہے۔

سابق امریکی صدور کے برعکس، ٹرمپ نے عہدے پر رہتے ہوئے اپنی آمدنی کا ریکارڈ ظاہر نہیں کیا اور اس معاملے سے متعلق کانگریس کے مطالبے کو روکنے کے لیے عدالتوں کا سہارا لیا۔

یہ جنگ منگل کو اپنے اختتام کو پہنچی جب عدالت نے فیصلہ دیا کہ ٹرمپ کے ٹیکس ریکارڈز ایوان نمائندگان کے سامنے رکھے جائیں۔

نیویارک ٹائمز نے ستمبر 2020 میں اپنی ایک رپورٹ میں انکشاف کیا تھا کہ ٹرمپ نے 2016 اور 2017 میں ٹیکس کی مد میں 750 ڈالر ادا کیے تھے۔

ٹرمپ نے اس رپورٹ کی تردید کرتے ہوئے اسے جعلی خبر قرار دیا تھا۔

یہ رپورٹ ایوان نمائندگان کے سامنے ایسے وقت رکھی جا رہی ہے جب اس ایوان پر ڈیموکریٹک پارٹی کا غلبہ چند ہفتوں میں ختم ہونے جا رہا ہے۔ کیونکہ ریپبلکن پارٹی نے حالیہ وسط مدتی انتخابات میں برتری حاصل کی ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں