بیت المقدس میں ایک فلسطینی بچے کی شہادت

فلسطینی بچہ

پاک صحافت بیت المقدس کے مشرق میں واقع گاؤں تقوع میں جمعرات کو صیہونی فوج کے حملے میں ایک سات سالہ فلسطینی بچہ شہید ہوگیا۔

پاک صحافت نے سپوتنک عربی کے حوالے سے بتایا ہے کہ صیہونی افواج کے حملے میں جمعرات کو سات سالہ فلسطینی بچہ "ریان یاسر سلیمان” شہید ہو گیا۔

فلسطینی میڈیا نے اعلان کیا ہے کہ بیت المقدس کے مشرق میں واقع گاؤں تقوع میں صہیونی فوج کے فلسطینی طلباء کے تعاقب کے بعد یہ بچہ بلندی سے بھاگتے ہوئے زمین پر گر گیا اور شہید ہوگیا۔

فلسطینی وزارت صحت نے اعلان کیا کہ بچہ ہسپتال پہنچنے سے پہلے ہی دم توڑ گیا اور اسے بچانے کی ڈاکٹروں کی کوششیں ناکام ہو گئیں۔

فلسطینی ذرائع نے اس سے قبل اعلان کیا تھا کہ مغربی کنارے کے جنوب میں واقع شہر دورہ پر صیہونی حکومت کے حملے کے دوران جمعرات کو 12 فلسطینی زخمی یا دم گھٹنے سے ہلاک ہو گئے۔

ہلال احمر کمیونٹی کے فلسطینی ذرائع نے مزید بتایا کہ اس کمیونٹی کے امدادی کارکنوں نے ہیبرون کے جنوب میں واقع شہر دورہ میں جھڑپوں کے دوران 12 زخمیوں کو امداد فراہم کی ہے۔

اس رپورٹ کے مطابق زخمیوں میں سے 7 افراد کو گولیاں لگیں اور 5 افراد آنسو گیس کی وجہ سے دم گھٹنے سے ہلاک ہوئے۔

اناطولیہ خبررساں ایجنسی نے عینی شاہدین کے حوالے سے اعلان کیا ہے کہ درجنوں فلسطینیوں اور صہیونی فوج کے فوجیوں کے درمیان جھڑپ اس وقت ہوئی جب اسرائیلی فوج نے ڈورا شہر پر حملہ کیا اور فوجی اس علاقے کے مکینوں کے بعض گھروں میں زبردستی گھس گئے۔

ان حملوں کے دوران صہیونی فوج نے فلسطینی مظاہرین کے خلاف براہ راست گولیوں اور آنسو گیس کا استعمال کیا اور فلسطینی نوجوانوں نے آنسو گیس کا مقابلہ کرنے کے لیے گاڑیوں کے ٹائر بھی جلائے۔

وقتاً فوقتاً صیہونی فوجیں مطلوب افراد کی تلاش کے بہانے مغربی کنارے کے شہروں اور قصبوں پر حملہ کرتی ہیں اور فلسطینیوں کے ساتھ تنازع شروع کر دیتی ہیں۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں