سعودی عرب میں عاشور سے قبل شیعوں کے خلاف کارروائیاں تیز ہو گئیں

عاشور کا پرچم

ریاض {پاک صحافت} سعودی حکومت نے عاشور سے قبل اس ملک میں شیعہ مسلمانوں کے خلاف کارروائیاں تیز کر دی ہیں۔

جوں جوں عاشور کا روزہ قریب آرہا ہے، سعودی عرب میں مقیم شیعہ برادری کے لیے حالات سخت تر ہوتے جارہے ہیں۔

سعودی عرب کے شیعہ اکثریتی علاقے قطیف میں سیکیورٹی سخت کرکے عزاداری میں شرکت کرنے والوں کو روکنے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔ یہ کام محرم میں حفاظتی انتظامات کے نام پر کیا جا رہا ہے۔

وہاں ایک قانون لایا گیا ہے کہ ہر وہ امام باڑہ جس میں مجلس ہو گی، اس کے مالک کو مجلس شروع ہونے سے پہلے پولیس کے پاس رجسٹر کرانا ہو گا اور وہ خود ہر قسم کے حادثے کا ذمہ دار ہو گا۔

سعودی عرب میں اس بار سڑکوں پر نکلنے پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔ اس بار کسی بھی گھر، عمارت یا عوامی مقام پر محرم سے متعلق کوئی بینر یا جھنڈا نہیں آویزاں کیا جا سکے گا۔ محرم الحرام کے حوالے سے سعودی حکومت کے نئے احکامات سے شیعہ برادری کے لوگ شدید غمزدہ ہیں۔

خیال رہے کہ سعودی عرب میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں عام ہیں۔ انسانی حقوق کی تنظیمیں سعودی عرب میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر تنقید کرتی رہی ہیں۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں