حماس کے ترجمان: القسام بریگیڈز کے خلاف صیہونی دھمکی کا کوئی اعتبار نہیں ہے

حماسی لیڈر

یروشلم {پاک صحافت} فلسطین کی مزاحمتی تحریک حماس کے ترجمان فوزی برھوم نے ہفتے کی صبح قطر کے الجزیرہ نیٹ ورک پر القسام بریگیڈز کے میزائلوں کی ویڈیو نشر ہونے کے ردعمل میں کہا کہ یہ پروگرام صہیونیوں کو یہ پیغام دیتا ہے کہ وہ جانیں۔ جو غزہ اور یروشلم کو دھمکیاں دے رہے ہیں، القسام کی طاقت کے خلاف ان کی دھمکیوں کا کوئی اعتبار نہیں ہے۔

فلسطینی "شہاب” نیٹ ورک سے آئی آر این اے کے مطابق، برہوم نے مزید کہا: "الجزیرہ نیٹ ورک کے پروگرام نے صہیونی دھمکیوں کے سائے میں فلسطینی عوام کو پرچم مارچ کرنے کا واضح پیغام دیا کہ القسام بٹالین کے پاس عزم اور صلاحیت ہے۔ اپنی پوری طاقت کے ساتھ جنگ ​​کو ختم کرو۔” یہ ہماری قوم کے اعتماد کا ذریعہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ صہیونی خطرہ بھی القسام کے سازوسامان کی حکمت کے ساتھ کوئی اعتبار نہیں رکھتا، جس نے سیکورٹی اور فوجی لحاظ سے ترقی کی ہے۔

حماس کے ترجمان نے قدس کو حماس اور دیگر فلسطینی مزاحمتی گروہوں اور صیہونیوں کے آگ سے کھیل کے لیے سرخ لکیر قرار دیتے ہوئے مزید کہا: القسام بریگیڈ اگر اسرائیل غلطی کرے تیار ہیں اور مزاحمت بہت مضبوط ہے۔

برہم نے کہا، "یروشلم میں ہمارے باشندے میدان جنگ میں کبھی بھی تنہا نہیں ہوں گے، اور الجزیرہ کے آج کے پیغام سے ظاہر ہوتا ہے کہ صہیونی غاصبوں کے خلاف فلسطین کا ایک متحدہ محاذ ہے، جسے ان کے خلاف بھڑکایا جانا چاہیے۔”

حماس کے ترجمان نے کہا: "اگر صیہونی قابض آنے والے دنوں میں ایک نئی حماقت کا ارتکاب کرنا چاہتے ہیں تو ان پر ایک نئی مساوات مسلط کی جائے گی اور قدس کے محور پر موجود مزاحمتی گروہ متحد ہیں”۔

برہم کا یہ تبصرہ حماس کے عسکری ونگ القسام بریگیڈز کے ایک سینیئر کمانڈر محمد السنوار کے قطر الجزیرہ کے ایک پروگرام میں جمعے کی شب اس انکشاف کے چند گھنٹے بعد آیا ہے کہ مزاحمتی گروہوں کا تازہ حملہ صیہونی حکومت کو لڑائی روکنے پر مجبور کر رہا ہے۔ القدس کی کرد تلوار میں مقبوضہ علاقوں میں 362 میزائل داغنا شامل تھا۔

القدس تلوار کی 11 روزہ جنگ کی چنگاری اپریل 2021 سے شیخ جراح اور مسجد اقصیٰ کے پڑوس میں رونما ہونے والے واقعات کے نتیجے میں بھڑک اٹھی۔

فلسطینی مزاحمتی گروپوں نے جنگ میں اپنی کارروائیوں کے لیے یروشلم کی تلوار کے نام کا انتخاب کیا ہے، جب کہ اسرائیل نے غزہ میں اپنی فوجی کارروائی کو ’دیواروں کا محافظ‘ قرار دیا ہے۔

اسرائیلی ذرائع کے مطابق 11 روزہ جنگ کے دوران مزاحمتی گروپوں نے جنوبی شہروں اور مقبوضہ علاقوں کے مرکز پر 4000 سے زائد راکٹ فائر کیے جس کے نتیجے میں 12 اسرائیلی ہلاک اور 330 کے قریب زخمی ہوئے۔

دوسری جانب، جنگ میں 200 سے زائد فلسطینی شہید اور ہزاروں زخمی ہوئے، غزہ کی پٹی کے مکینوں کی معاشی صورتحال ابتر ہوئی اور سرکاری اعدادوشمار کے مطابق تقریباً 479 ملین ڈالر کا نقصان ہوا۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں