8 C
Pakistan
منگل, نومبر 30, 2021

سابق اسرائیلی جرنیلوں نے اعتراف کرلیا کہ تل ابیب ایران پر حملہ کرنے کی طاقت نہیں رکھتا

تل ابیب {پاک صحافت} اسرائیل کی خفیہ ایجنسی موساد کے سابق سربراہوں کا کہنا ہے کہ ایران کے معاملے میں اسرائیل کو بے بس کر دیا گیا ہے اور اب ایسا لگتا ہے کہ اسرائیل کے پاس ایران کے معاملے میں کوئی حکمت عملی نہیں ہے اور نہ ہی وہ ایران کی جوہری تنصیبات پر حملہ کر سکتا ہے۔

موساد کے سابق سربراہ تمیر باردو نے کہا کہ اسرائیل کے پاس ایران کی جوہری تنصیبات کو تباہ کرنے کی صلاحیت نہیں ہے اس لیے اسرائیل کو ایسے کسی بھی حملے سے باز رہنا چاہیے۔

باردو نے کہا کہ ایران کے بارے میں اسرائیلی وزیر اعظم نفتالی بینیٹ کا حالیہ بیان سابق اسرائیلی حکومت کے بیانات سے ملتا جلتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ اسرائیل اب دوبارہ اسی راستے پر چل رہا ہے۔

موساد کے سابق سربراہ یو سی کوہن نے بھی کہا کہ ایران کی جوہری تنصیبات پر حملہ کرنا بہت مشکل اور پیچیدہ کام ہے اور اسرائیل ایران کے یورینیم افزودگی کے پروگرام کو روکنے میں ناکام رہا ہے۔ جوہری مذاکرات کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ اگر جوہری مذاکرات کے نتیجے میں ایران کی جوہری تنصیبات تباہ نہیں ہوتیں تو یہ اسرائیل کے لیے گہری تشویش کی بات ہے۔

اسرائیل کی ملٹری انٹیلی جنس ایجنسی امان کے سابق کمانڈر آموس گیلاد نے اسرائیل کو امریکہ کے انتباہ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اسرائیل کو امریکہ کے انتباہ کو سنجیدگی سے لینا چاہئے کہ ایران کی جوہری تنصیبات پر حملہ کرنا بے سود ہے۔

اس سے قبل اسرائیل کے سینیئر فوجی کمانڈر ڈین ہالٹس نے بھی کہا تھا کہ ایران کے ساتھ برا معاہدہ بھی بہتر ہے کیونکہ اس سے ایران کی جوہری سرگرمیوں پر نظر رکھنے کا راستہ کھل جائے گا۔

ایران نے بارہا کہا ہے کہ اسے شہری اہداف کے لیے جوہری ٹیکنالوجی تیار کرنے کا قانونی حق حاصل ہے اور اس کا جوہری پروگرام اسٹریٹجک اہداف کی طرف لے جانے والا نہیں ہے۔

آئی اے ای اے نے بھی تصدیق کی کہ ایران کی جوہری سرگرمیوں کا مقصد شہری اہداف ہے۔

امریکی صدر جو بائیڈن کا کہنا ہے کہ وہ جوہری معاہدے کی طرف واپسی چاہتے ہیں اور اس تناظر میں آئندہ ویانا مذاکرات اہم ہیں۔

Related Articles

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

3 − 1 =

Latest Articles