ملاقات

آیت اللہ خامنہ ای نے سائنس اولمپیاڈ میں تمغے جیتنے والوں سے ملاقات میں کہا: ہم آپ کو ایک عظیم سرمایہ سمجھتے ہیں

پاک صحافت رہبر معظم انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے ہفتہ کے روز ملک اور بیرون ملک سائنس اولمپیاڈز میں میڈل جیتنے والے اور غیر معمولی صلاحیتوں کے مالک بعض طلبہ سے ملاقات کرتے ہوئے ان طلبہ کو گہری اور حقیقی امید کی وجہ بتائی۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ مجھے نوجوانوں اور ان کے جوش و جذبے پر پورا بھروسہ ہے اور میں آپ کو ایک بہت بڑا اثاثہ سمجھتا ہوں جس کی قیمت ان تمغوں سے کہیں زیادہ ہے جن پر آپ فخر کر سکتے ہیں۔

رہبر انقلاب اسلامی نے ملک میں تبدیلی لانے اور تاریخ کے دھارے کو بدلنے اور سو فیصد سازگار ماحول پیدا کرنے کے لیے موثر اور غیر معمولی باصلاحیت نوجوانوں کی نصیحت کو بہت اہم قرار دیا۔

رہبر معظم انقلاب اسلامی نے فرمایا کہ انسانی عناصر نے سیاست دانوں اور حکام کے معنوں میں نہیں بلکہ نظریاتی، اخلاقی اور روحانی سرپرستوں کے لحاظ سے ملک کو ایرانی تاریخ کے ایک ایسے دور میں پہنچایا جو کامیابی اور عظمت کے لائق ہے۔

انہوں نے ایران میں برطانیہ اور امریکہ کے تقریباً 200 سال کے سیاسی تسلط کے دور کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اس دور میں ہماری ثقافت اور سائنسی ترقی تقریباً تباہ ہو چکی تھی اور سیاسی نقطہ نظر سے ایران کو نچلی سطح پر رکھا گیا تھا لیکن مردانہ طاقت پر بھروسہ کرتے ہوئے، جن میں زیادہ تر نوجوان تھے، انقلاب نے سیاست کا رخ موڑ دیا اور مختلف شعبوں میں زبردست ترقی کی۔

آیت اللہ خامنہ ای نے سنہ 2000 کی دہائی میں شروع ہونے والی زبردست علمی و سائنسی مہم کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا کہ موجودہ حالات میں ہمیں ایک فکری اور سائنسی چھلانگ کی ضرورت ہے تاکہ ہم عالمی سطح پر علم و سائنس کی صف اول تک پہنچ سکیں اور یہ ممکن ہو سکے گا۔ ہمارے باصلاحیت نوجوانوں کی کوششوں سے اور اس کے لیے ماحول پیدا کرنا۔

انہوں نے ملک کی سیاسی آزادی کو ایک اچھی طرح سے محسوس ہونے والی حقیقت قرار دیتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے پاس اہم عالمی مسائل کے حوالے سے اہم موقف، نظریات اور دلائل ہیں جنہیں ہمارے مخالفین بھی اہمیت دیتے ہیں۔

رہبر انقلاب اسلامی نے تاکید کی کہ اس سیاسی آزادی کو نقصان نہیں پہنچانا چاہیے اور جو بھی حکومت برسراقتدار آئے اسے اس کی حفاظت کرنی چاہیے۔

انتخابات اور اس میں عوام کی بھرپور شرکت پر زور دیتے ہوئے انہوں نے انتخابات میں زیادہ سے زیادہ لوگوں کی شرکت کو انتہائی ضروری قرار دیا۔

ملاقات کے اختتام پر میڈل لانے والے طلباء نے رہبر معظم انقلاب اسلامی کو اپنے میڈل پیش کئے۔ رہبر معظم انقلاب اسلامی نے طلباء کے اس اقدام کو سراہتے ہوئے فرمایا کہ میرے بیٹو، میں تمہارے تمغے قبول کرتا ہوں لیکن میرا یقین ہے کہ یہ تمغے تمہارے پاس ہونے چاہئیں۔ اس بنیاد پر میں آپ کو فخر کے طور پر تمغے واپس کر رہا ہوں۔

اس ملاقات میں تمغے لانے والے 8 طلباء نے مختلف امور اور موضوعات کے حوالے سے اپنے خیالات کا اظہار کیا اور رہبر معظم انقلاب اسلامی نے متعلقہ حکام سے طلباء کے اچھے نقطہ نظر کے جائزے پر بہت زیادہ تاکید کی۔

رہبر معظم انقلاب اسلامی سے ملاقات سے قبل ذہین اور ہونہار طلباء اور سپاہیوں نے رہبر معظم کی امامت میں ظہر یعنی ظہر کی نماز ادا کی۔

یہ بھی پڑھیں

اسرائیل

غزہ میں مزاحمتی کمانڈروں کے قتل کی جھوٹی خبریں شائع کرنے سے “اسرائیل” کا کیا مقصد ہے؟

پاک صحافت ایک رپورٹ میں عرب دنیا کے معروف تجزیہ نگار عبدالباری عطوان نے غزہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے