اسرائیلی

ہزاروں اسرائیلی یونان کیوں بھاگے؟

پاک صحافت عبرانی زبان کے میڈیا نے رپورٹ کیا کہ صیہونی اسرائیل سے فرار ہو رہے ہیں اور غزہ کی جنگ شروع ہونے کے بعد یونان میں مستقل رہائش میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔

صیہونی حکومت کے اقتصادی اخبار “دی مارکر” نے انکشاف کیا ہے کہ بہت سے اسرائیلی یونان فرار ہو رہے ہیں۔ اسی طرح پارسٹوڈے اور تسنیم نیوز ایجنسیوں نے عبرانی بولنے والے ایک گروپ کے حوالے سے خبر دی ہے کہ اس وقت ہزاروں اسرائیلی خاندانوں نے یونان کو اپنی مستقل یا عارضی پناہ گاہ کے طور پر چنا ہے اور چونکہ بہت سے اسرائیلی یونان منتقل ہو رہے ہیں اور فلیٹس خرید رہے ہیں، صورتحال ایسی ہے کہ فلیٹس خریدنے کی مانگ فروخت ہونے والے فلیٹس کی تعداد سے تجاوز کر گئی ہے۔

“دی مارکر” اخبار کا رپورٹر ڈرور ریوفمین سے بات کر رہا ہے۔ درر ریوفمین  65 سال کے ہیں اور یونانی جزیرے Iva پر پراپرٹی بروکر کے طور پر کام کرتے ہیں۔

اس پارٹی کے دلال کا کہنا ہے: ایتھنز کی طرف پناہ گزینوں کا ایک مستقل سلسلہ جاری ہے، لیکن کیپسگیا اور گلوادیا میں بھی اسرائیلی پناہ گزینوں کی نمایاں تعداد دیکھی جا سکتی ہے۔ آج سینکڑوں اسرائیلی خاندان ایتھنز کے شمال میں دیکھے جا سکتے ہیں اور یہاں تک کہ انہوں نے اپنے بچوں کے لیے کنڈرگارٹن اور یہودی اسکول بھی بنائے ہیں۔

اس رپورٹ کے دوسرے حصے میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ وہاں جانے والے بہت سے اسرائیلی واپس آنے کا ارادہ نہیں رکھتے اور یہاں رہنے کے لیے آئے ہیں۔

ایتھنز میں رہنے والی ایک اسرائیلی تانیہ کریتسکی یونان میں اسرائیلیوں کے لیے ایک سوشل سائٹ کی ڈائریکٹر ہیں۔ اس عبرانی بولنے والے میڈیا سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا ہے کہ ہمارا اسرائیل واپسی کا کوئی ارادہ یا پروگرام نہیں ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ جب میں یہاں آیا تھا تو اسرائیلیوں کی تعداد 50 تھی لیکن غزہ جنگ شروع ہونے کے بعد ہماری تعداد 5 ہزار سے زائد ہو گئی ہے۔ ہم واٹس ایپ گروپ میں 1500 سے 2000 ایکٹیو لوگوں کو گن سکتے ہیں۔ حالانکہ واٹس ایپ پر ایکٹیو نہ ہونے والے افراد اور ایسے لوگوں کے اہل خانہ کی تعداد بہت زیادہ ہے۔

اسی طرح انہوں نے بتایا کہ جب کئی خاندانوں کے شوہر جنگ میں گئے تو وہ یہاں آئے۔ اس طرح کہ فلیٹ دیکھنے آنے والی خواتین کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے، کچھ بچوں کے ساتھ۔

اس کے بعد اسرائیلی رپورٹر اسرائیل کے کچھ مقامی باشندوں کے پاس جاتا ہے اور کہتا ہے کہ جب میں نے ایتھنز میں ایک کافی شاپ کے مالک سے اس کے اسرائیلی دوست کے بارے میں پوچھا تو اس نے کہا کہ میرے خیال میں اب وقت آگیا ہے کہ تم اسرائیلی ہمارے ملک میں چلے جاؤ اور جائیداد خریدنے کے لیے کسی دوسرے ملک کا انتخاب کریں۔ کہیں اور ہجرت کرنا بہتر ہے۔

رپورٹر پھر کہتا ہے کہ جب ہم نے ان سے پوچھا کہ وہ ہم سے اتنے ناراض کیوں ہیں؟ اور روسی شہریوں کو یہ تاثر کیوں نہیں دیا گیا جب کہ ان کا ملک یوکرین کے ساتھ جنگ ​​میں ہے۔ اس کے جواب میں انہوں نے کہا کہ شاید ہم روسیوں کو دوست بھی نہ رکھیں لیکن یہ آپ کی حکومت ہے جو یہ جرم کر رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

اسرائیل

غزہ میں مزاحمتی کمانڈروں کے قتل کی جھوٹی خبریں شائع کرنے سے “اسرائیل” کا کیا مقصد ہے؟

پاک صحافت ایک رپورٹ میں عرب دنیا کے معروف تجزیہ نگار عبدالباری عطوان نے غزہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے