میدویدیف: امریکہ اور یورپ کے درمیان شادی طلاق کا باعث بنے گی

میدویدیف

پاک صحافت روس کے سابق صدر دمتری میدویدیف نے اعلان کیا ہے کہ امریکہ اور یورپی یونین کے درمیان شادی ممکنہ طور پر طلاق پر منتج ہو جائے گی، ان خبروں کے شائع ہونے کے بعد کہ واشنگٹن یوکرین کی جنگ اور یورپی کساد بازاری سے فائدہ اٹھا رہا ہے۔

پاک صحافت کے رشتودی نیوز چینل کے مطابق، میدویدیف نے اپنے ٹیلی گرام چینل پر ان بیانات کی وجہ بیان کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ نے ایک "طاقتور آدمی” کے طور پر اپنے ساتھی کو اقتصادی طور پر دھوکہ دیا ہے۔

روس کی قومی سلامتی کونسل کے نائب نے مزید کہا: امریکہ کا نہ صرف اپنی آمدنی کو بانٹنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے بلکہ اس کے برعکس وہ اپنے دیرینہ ساتھی کے ذخائر سے چوری کرتا ہے اور بغیر کسی ہچکچاہٹ کے یہ رقم اپنی جیبوں میں ڈالتا ہے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ واشنگٹن یورپی کمپنیوں کے لیے گھریلو حالات کو پرکشش بناتا ہے اور دوسرے ممالک کو اپنی مصنوعات خریدنے کی ترغیب دیتا ہے۔ میدویدیف نے کہا کہ یورپی اشیاء کی مارکیٹ سکڑنے کی ایک وجہ اس براعظم کے ممالک کا روس سے الگ ہونے کا فیصلہ ہے۔

روس کے سابق صدر نے مزید کہا: "آپ واقعی امیروں کی نعمتوں پر بھروسہ نہیں کر سکتے۔” یہی وجہ ہے کہ آج یورپ امداد کے بغیر رہ گیا ہے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ یورپی یونین "اپنے غدار پارٹنر سے الگ ہو کر ایک نئی آزاد زندگی کا آغاز کر سکتی ہے”، ایک عجیب تشبیہ کے ساتھ شامل کیا کہ شاید ان کے پاس اس کے لیے کافی عزم اور طاقت نہیں ہے۔

یورپی یونین کے رہنماؤں اور ان کے امریکی ہم منصبوں کے درمیان بڑھتی ہوئی خلیج بلاک کے عہدیداروں کے تبصروں اور مغربی میڈیا کی رپورٹس سے واضح ہوتی ہے۔

پولیٹیکو نے گزشتہ ہفتے رپورٹ کیا تھا کہ یورپی یونین کے اعلیٰ حکام ناراض ہیں کہ امریکہ بلاک کے رکن ممالک کے درمیان بحران سے فائدہ اٹھا رہا ہے۔ وہ اس بات سے بھی ناخوش تھے کہ امریکی توانائی فراہم کرنے والے یورپ کو مائع قدرتی گیس گھریلو قیمت سے چار گنا پر فروخت کر رہے ہیں، اور یہ کہ امریکی فوجی ٹھیکیدار یوکرین کو ہتھیاروں کی زیادہ فروخت سے فائدہ اٹھا رہے ہیں۔

یورپی یونین کے حکام نے امریکی افراط زر کے قانون اور یورپی کمپنیوں پر اس کے اثرات پر بھی اعتراض کیا۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں