صیہونیوں کے سر پر پوتن کی تلوار

جھنڈے

پاک صحافت یوکرین جنگ کے آغاز کے بعد سے شروع ہونے والے تل ابیب ماسکو تعلقات میں کشیدگی حالیہ دنوں میں اپنے عروج پر پہنچ گئی ہے۔ صیہونی حکومت، جس نے یوکرین میں روس کی فوجی کارروائی کے پہلے ہفتوں کے دوران کچھ غیر جانبداری برقرار رکھنے کی کوشش کی، امریکہ اور یورپی اتحادیوں کے دباؤ میں یوکرین میں روسی فوج کے جنگی جرائم کا دعویٰ کرتی رہی اور بالآخر روس کو قانون کی کونسل سے نکال دیا۔ جنرل اسمبلی میں اقوام متحدہ کے لوگوں نے ووٹ دیا اور ولادیمیر پوتن کے غصے کا سبب بنے۔

صیہونی حکومت کی روس مخالف پالیسیوں کے بعد ماسکو حکومت نے بہت سے انتقامی اقدامات کیے ہیں اور یہ دباؤ اب بھی جاری ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ صیہونیوں کو علاقائی اور بین الاقوامی معاملات میں روس کی شدید ضرورت ہے اور نام نہاد گوشت ماسکو کے دانتوں تلے ہے۔ پیوٹن کے پاس اسرائیل کے حوالے سے مختلف اوزار اور تاش ہیں اور ایسا لگتا ہے کہ وہ انہیں ایک ایک کر کے پلٹ رہے ہیں۔

انسانی حقوق کی کونسل میں تل ابیب کی ووٹنگ کے چند روز بعد روسی وزارت خارجہ نے ایک بے مثال اقدام کرتے ہوئے مسجد اقصیٰ کے صحن اور مغربی کنارے میں بھی فلسطینیوں کے خلاف صہیونی فوج کے تشدد کی شدید مذمت کی اور کہا۔ حکومت کی کابینہ پر فلسطینی زمینوں پر ترقی پسندانہ قبضے کا الزام لگایا۔ روس نے غزہ کو 20 لاکھ فلسطینیوں کے لیے جیل سے بھی تشبیہ دی ہے جو زمینی، سمندری اور فضائی ناکہ بندی میں ہیں۔

شام میں جو سلامتی کے حوالے سے تل ابیب کے لیے بہت اہمیت کا حامل ہے، پیوٹن نے صیہونیوں کو آڑے ہاتھوں لیا اور مئی میں شام پر ایک فضائی حملے میں انہوں نے S-300 دفاعی نظام سے اسرائیلی میزائلوں کا مقابلہ کیا، جس کے نتیجے میں 16 میزائل اور ایک اسرائیلی ڈرون مار گرایا گیا۔ صیہونی حکومت کے چینل 13 نے "شام میں روس اور اسرائیل کے درمیان فضائی تصادم” کے عنوان سے ایک رپورٹ میں لکھا ہے کہ ان سالوں کے دوران جب اسرائیل شام پر حملہ کر رہا ہے، یہ پہلا موقع ہے کہ S-300 کا رد عمل ظاہر کیا گیا ہے۔ ایک ایسا عمل جس نے صہیونیوں کو اس حد تک حیران کردیا کہ انہوں نے اس پر خاموش رہنے کو ترجیح دی۔ اس مسئلے کی اہمیت کے حوالے سے کہا جانا چاہیے کہ وال سٹریٹ جرنل کے مطابق قابض حکومت نے 2017 سے 2022 تک شام کی سرزمین پر 400 سے زائد حملے کیے ہیں اور ان حملوں میں سے کسی بھی حملے میں S-300 سسٹم استعمال نہیں کیا گیا۔

لیکن پیوٹن کی اسرائیل مخالف مشین ابھی تک نہیں رکی۔ روسی حکومت نے حال ہی میں صیہونی حکومت کو ایک اور دھچکا پہنچایا اور اس ملک میں سرگرم سب سے اہم صہیونی ادارے یہودی ایجنسی کی سرگرمیاں بند کر دیں۔ ایک ایجنسی جو صیہونیوں کے جھوٹے قوم سازی کے عمل کی خدمت کرتی ہے اور یہودیوں کو مقبوضہ علاقوں میں منتقل کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ اس کے علاوہ، صیہونی ذرائع نے اطلاع دی ہے کہ روس نے کئی دوسرے یہودی اداروں کو بھی اسی طرح کی وارننگ دی ہے اور کہا ہے کہ وہ انہیں غیر ملکی ایجنٹ کے طور پر متعارف کرا سکتا ہے۔ یہ اقدام صیہونی دہشت گرد حکومت کے وقار پر ایک بڑا دھچکا ہے اور صیہونی حکام کے فوری ردعمل کو مشتعل کر دیا ہے۔ مایوس اور بے بس اسرائیلی وزیر اعظم کریملن کو راضی کرنے کے لیے عجلت میں ایک وفد ماسکو بھیجنا چاہتا تھا، لیکن روسی حکومت نے بھی وفد کے سفر پر رضامندی ظاہر نہیں کی۔

صہیونی میڈیا کا کہنا ہے کہ لاپڈ کی کابینہ روس کو جواب دینے کے لیے سیاسی اقدامات کی تیاری کر رہی ہے۔ "یدیوت احرانوت” نے اس بارے میں لکھا: اگر روس اس ملک میں یہودی ایجنسی کے دفاتر کو بند کرنے کا حتمی فیصلہ کرتا ہے، تو ماسکو کا اسرائیل کا ردعمل اسرائیلی سفیر کو بلانے کی حد تک ہو گا، جہاں زمین کی ملکیت کی منتقلی کو روکا جائے گا۔ الیگزینڈر چرچ روس میں واقع ہے اور یوکرین کی مدد کے لیے نئے اقدامات کر رہا ہے۔ تاہم صہیونی میڈیا نے خود اعتراف کیا ہے کہ تل ابیب اس سلسلے میں انتہائی بند اور غیر فیصلہ کن ہے اور ان اقدامات پر ماسکو کے شدید ردعمل سے خوفزدہ ہے۔ ہاریٹز نے اسی تناظر میں لکھا: بہت سے اسرائیلی حکام ان حرکتوں سے پریشان ہیں جو کشیدگی میں اضافے اور اسرائیل کے مفادات کو کمزور کرنے کا باعث بن سکتی ہیں۔

آخر میں اس بات پر تاکید کی جانی چاہیے کہ اب ماسکو کا ہاتھ ہے اور صیہونیوں کے سر پر پوٹن کی جیتی ہوئی تلوار رکھ دی گئی ہے، اور کوئی بھی غلط اندازہ تل ابیب کو اندرون اور خطے میں ایک گہری سلامتی کی صورتحال میں ڈال دے گا۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں