8.1 C
Pakistan
منگل, نومبر 30, 2021

عراق اور افغانستان میں شکست

پاک صحافت امریکہ نے تاریخی طور پر مختلف ذرائع سے مغربی ایشیائی خطے میں اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کی کوشش کی ہے۔ اس کے لیے امریکیوں نے سب سے پہلے ہارڈ پاور کا سہارا لیا اور اس کی نا اہلی کا احساس کرنے کے بعد نرم طاقت کا رخ کیا تاکہ وہ مغربی ایشیا میں اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کے قابل ہوسکیں۔

مغربی ایشیائی خطے میں داخل ہونے کا امریکی نعرہ یہ تھا کہ ہم اس خطے کے لوگوں کو بچانے آئے ہیں۔ کچھ عرصے بعد امریکیوں کی سافٹ پاور کی نا اہلی عیاں ہو گئی اور وہ سمارٹ پاور کی طرف مائل ہو گئے۔ ان تمام کوششوں کے باوجود امریکہ اپنے مقاصد حاصل کرنے میں ناکام رہا۔ اس کا یہ مطلب نہیں کہ مغربی ایشیائی خطے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی واشنگٹن کی کوششیں رک گئی ہیں۔

مغربی ایشیائی خطے میں شکست سے دوچار ہونے کے بعد امریکیوں نے اسے غیر مستحکم کرنے کے منصوبے کو اپنے ایجنڈے میں رکھا۔ اس کارروائی کا بنیادی مقصد ان ممالک کو شامل کرنا تھا جو اندرونی مسائل اور مسائل میں مزاحمت کی حمایت کرتے ہیں۔ تاہم آج ہم دیکھتے ہیں کہ امریکی کسی بھی ملک میں محفوظ نہیں ہیں۔ عراق، لبنان، یمن یا افغانستان میں ان کی کوئی حفاظت نہیں ہے۔

مغربی ایشیائی خطے میں ترقی کے سلسلے کو الگ نہیں کیا جا سکتا۔ اگر ہم یہ کہتے ہیں کہ امریکہ اور صیہونی حکومت اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کی کوشش کر رہے ہیں تو ہمارا مطلب یہ ہے کہ پورے مغربی ایشیائی خطے میں گھسنے کی کوشش کرنا ہے۔ اس خطے کی ترقی آپس میں جڑی ہوئی ہے۔ اس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ مغربی ایشیائی خطے کے مختلف ممالک میں اداکاروں کے مشترکہ مفادات ہیں اور مشترکہ مفادات کی پیروی کرتے ہیں۔

مثال کے طور پر مغربی ایشیا میں ہونے والی پیش رفت میں ایک طرف امریکہ اور صیہونی حکومت اور دوسری طرف مزاحمتی قوتیں اور اس کے اتحادی نظر آتے ہیں۔ سوویت یونین کے انہدام کے بعد امریکیوں کا خیال تھا کہ وہ دنیا کی غیر متنازعہ طاقت ہیں اور کوئی طاقت انہیں شکست نہیں دے سکتی۔ دراصل سوویت یونین کے انہدام کے بعد امریکی خود کو دنیا کی مطلق العنان طاقت سمجھتے تھے۔

اسی طرز عمل اور رویے کی وجہ سے واشنگٹن نے مختلف ممالک میں اپنا اثر و رسوخ بڑھانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔ عراق اور افغانستان کی جنگیں بھی اسی مقصد کے لیے لڑی گئیں۔ امریکیوں نے ہمیشہ اپنی عالمی خودمختاری کو مستحکم کرنے کی کوشش کی ہے۔ "گزشتہ ایک سال کے دوران، انہوں نے اسرائیل کی سلامتی کو یقینی بنانے کے لیے لبنان میں مزاحمت کو غیر مسلح کرنے کی بہت کوششیں کی ہیں، لیکن وہ ایسا کرنے میں ناکام رہے ہیں۔”

مغربی ایشیائی خطے میں امریکی کوشش یہ رہی ہے کہ اسلامی ممالک کو طاقتور بننے سے روکا جائے۔ اسی لیے انہوں نے خطے میں صیہونی حکومت کی تشکیل کی۔ اسلامی ممالک میں انتشار ہمیشہ سے امریکی حکمت عملی کا لازمی حصہ رہا ہے۔ ایسا کرکے امریکی یہ کہنا چاہتے ہیں کہ اسلام میں حکومت کرنے کی طاقت نہیں ہے۔

Related Articles

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

twenty − 3 =

Latest Articles